Jaun Elia

جون ایلیا

کون آیا ہے

کوئی نہیں آیا ہے پاگل


تیز ہوا کے جھونکے سے دروازہ کھلا ہے

اچھا یوں ہے


بیکاری میں ذات کے زخموں کی سوزش کو اور بڑھانے

تیز روی کی راہ گزر سے


محنت کوش اور کام کے دن کی

دھول آئی ہے دھوپ آئی ہے


جانے یہ کس دھیان میں تھا میں

آتا تو اچھا کون آتا


کس کو آنا تھا کون آتا



www.000webhost.com