Jaun Elia

جون ایلیا

شام تک میری بیکلی ہے شراب

شام کو میری سر خوشی ہے شراب


جہل واعظ کا اس کو راس آئے

صاحبو میری آگہی ہے شراب


رنگ رس ہے میری رگوں میں رواں

بخدا میری زندگی ہے شراب


ناز ہے اپنی دلبری پہ مجھے

میرا دل میری دلبری ہے شراب


ہے غنیمت جو ہوش میں نہیں میں

شیخ تجھ کو بچا رہی ہے شراب


حس جو ہوتی تو جانے کیا کرتا

مفتیوں میری بے حسی ہے شراب



www.000webhost.com