Jaun Elia

جون ایلیا

شام ہوئی ہے یار آئے ہیں یاروں کے ہم راہ چلیں

آج وہاں قوالی ہوگی جونؔ چلو درگاہ چلیں


اپنی گلیاں اپنے رمنے اپنے جنگل اپنی ہوا

چلتے چلتے وجد میں آئیں راہوں میں بے راہ چلیں


جانے بستی میں جنگل ہو یا جنگل میں بستی ہو

ہے کیسی کچھ نا آگاہی آؤ چلو ناگاہ چلیں


کوچ اپنا اس شہر طرف ہے نامی ہم جس شہر کے ہیں

کپڑے پھاڑیں خاک بہ سر ہوں اور بہ عز و جاہ چلیں


راہ میں اس کی چلنا ہے تو عیش کرا دیں قدموں کو

چلتے جائیں چلتے جائیں یعنی خاطر خواہ چلیں



www.000webhost.com