Jaun Elia

جون ایلیا

شاخ امید جل گئی ہوگی

دل کی حالت سنبھل گئی ہوگی


جونؔ اس آن تک بخیر ہوں میں

زندگی داؤ چل گئی ہوگی


اک جہنم ہے میرا سینہ بھی

آرزو کب کی گل گئی ہوگی


سوزش پرتو نگاہ نہ پوچھ

مردمک تو پگھل گئی ہوگی


ہم نے دیکھے تھے خواب شعلوں کے

نیند آنکھوں میں جل گئی ہوگی


اس نے مایوس کر دیا ہوگا

پھانس دل سے نکل گئی ہوگی


اب تو دل ہی بدل گیا اب تو

ساری دنیا بدل گئی ہوگی


دل گلی میں رقیب دل کا جلوس

واں تو تلوار چل گئی ہوگی


گھر سے جس روز میں چلا ہوں گا

دل کی دلی مچل گئی ہوگی


دھوپ یعنی کہ زرد زرد اک دھوپ

لال قلعے سے ڈھل گئی ہوگی


ہجر حدت میں یاد کی خوشبو

ایک پنکھا سا جھل گئی ہوگی


آئی تھی موج سبز باد شمال

یاد کی شاخ پھل گئی ہوگی


وہ دم صبح غسل خانے میں

میرے پہلو سے شل گئی ہوگی


شام صبح فراق دائم ہے

اب طبیعت بہل گئی ہوگی



www.000webhost.com