Jaun Elia

جون ایلیا

میں نہ ٹھہروں نہ جان تو ٹھہرے

کون لمحوں کے روبرو ٹھہرے


نہ گزرنے پہ زندگی گزری

نہ ٹھہرنے پہ چار سو ٹھہرے


ہے مری بزم بے دلی بھی عجیب

دل پہ رکھوں جہاں سبو ٹھہرے


میں یہاں مدتوں میں آیا ہوں

ایک ہنگامہ کو بہ کو ٹھہرے


محفل رخصت ہمیشہ ہے

آؤ اک حشر ہا و ہو ٹھہرے


اک توجہ عجب ہے سمتوں میں

کہ نہ بولوں تو گفتگو ٹھہرے


کج ادا تھی بہت امید مگر

ہم بھی جونؔ ایک حیلہ جو ٹھہرے


ایک چاک برہنگی ہے وجود

پیرہن ہو تو بے رفو ٹھہرے


میں جو ہوں کیا نہیں ہوں میں خود بھی

خود سے بات آج دو بدو ٹھہرے


باغ جاں سے ملا نہ کوئی ثمر

جونؔ ہم تو نمو نمو ٹھہرے



www.000webhost.com