Jaun Elia

جون ایلیا

خواب کی حالتوں کے ساتھ تیری حکایتوں میں ہیں

ہم بھی دیار اہل دل تیری روایتوں میں ہیں


وہ جو تھے رشتہ ہائے جاں، ٹوٹ سکے بھلا کہاں

جان وہ رشتہ ہائے جاں اب بھی شکایتوں میں ہیں


ایک غبار ہے کہ ہے دائرہ وار پر فشاں

قافلہ ہائے کہکشاں تنگ ہیں وحشتوں میں ہیں


وقت کی درمیانیاں کر گئیں جاں کنی کو جاں

وہ جو عداوتیں کہ تھیں آج محبتوں میں ہیں


پرتو رنگ ہے کہ ہے دید میں جانشین رنگ

رنگ کہاں ہیں رونما رنگ تو نکہتوں میں ہیں


ہے یہ وجود کی نمود اپنی نفس نفس گریز

وقت کی ساری بستیاں، اپنی ہزیمتوں میں ہیں


گرد کا سارا خانماں ہے سر دشت بے اماں

شہر ہیں وہ جو ہر طرح گرد کی خدمتوں میں ہیں


وہ دل و جان صورتیں جیسے کبھی نہ تھیں کہیں

ہم انہیں صورتوں کے ہیں ہم انہیں صورتوں میں ہیں


میں نہ سنوں گا ماجرا معرکہ ہائے شوق کا

خون گئے ہیں رائیگاں رنگ ندامتوں میں ہیں



www.000webhost.com