Jaun Elia

جون ایلیا

کیا ہوئے آشفتہ کاراں کیا ہوئے

یاد یاراں یار یاراں کیا ہوئے


اب تو اپنوں میں سے کوئی بھی نہیں

وہ پریشاں روزگاراں کیا ہوئے


سو رہا ہے شام ہی سے شہر دل

شہر کے شب زندہ داراں کیا ہوئے


اس کی چشم نیم وا سے پوچھیو

وہ ترے مژگاں شماراں کیا ہوئے


اے بہار انتظار فصل گل

وہ گریباں تار تاراں کیا ہوئے


کیا ہوئے صورت نگاراں خواب کے

خواب کے صورت نگاراں کیا ہوئے


یاد اس کی ہو گئی ہے بے اماں

یاد کے بے یادگاراں کیا ہوئے



www.000webhost.com