Jaun Elia

جون ایلیا

جو ہوا جونؔ وہ ہوا بھی نہیں

یعنی جو کچھ بھی تھا وہ تھا بھی نہیں


بس گیا جب وہ شہر دل میں مرے

پھر میں اس شہر میں رہا بھی نہیں


اک عجب طور حال ہے کہ جو ہے

یعنی میں بھی نہیں خدا بھی نہیں


لمحوں سے اب معاملہ کیا ہو

دل پہ اب کچھ گزر رہا بھی نہیں


جانیے میں چلا گیا ہوں کہاں

میں تو خود سے کہیں گیا بھی نہیں


تو مرے دل میں آن کے بس جا

اور تو میرے پاس آ بھی نہیں



www.000webhost.com