Jaun Elia

جون ایلیا

ہم کہاں اور تم کہاں جاناں

ہیں کئی ہجر درمیاں جاناں


رائیگاں وصل میں بھی وقت ہوا

پر ہوا خوب رائیگاں جاناں


میرے اندر ہی تو کہیں غم ہے

کس سے پوچھوں ترا نشاں جاناں


عالم بیکران رنگ ہے تو

تجھ میں ٹھہروں کہاں کہاں جاناں


میں ہواؤں سے کیسے پیش آؤں

یہی موسم ہے کیا وہاں جاناں


روشنی بھر گئی نگاہوں میں

ہو گئے خواب بے اماں جاناں


درد مندان کوۓ دل داری

گئے غارت جہاں تہاں جاناں


اب بھی جھیلوں میں عکس پڑتے ہیں

اب بھی نیلا ہے آسماں جاناں


ہے جو پرکھوں تمہارا عکس خیال

زخم آئے کہاں کہاں جاناں



www.000webhost.com