Jaun Elia

جون ایلیا

دل کی ہر بات دھیان میں گزری

ساری ہستی گمان میں گزری


ازل داستاں سے اس دم تک

جو بھی گزری اک آن میں گزری


جسم مدت تری عقوبت کی

ایک اک لمحہ جان میں گزری


زندگی کا تھا اپنا عیش مگر

سب کی سب امتحان میں گزری


ہائے وہ ناوک گزارش رنگ

جس کی جنبش کمان میں گزری


وہ گدائی گلی عجب تھی کہ واں

اپنی اک آن بان میں گزری


یوں تو ہم دم بہ دم زمیں پہ رہے

عمر سب آسمان میں گزری


جو تھی دل طائروں کی مہلت بود

تا زمیں وہ اڑان میں گزری


بود تو اک تکان ہے سو خدا

تیری بھی کیا تکان میں گزری



www.000webhost.com